داستاں آنکھوں میں رہ جائے


جو بھی ہوٹھوں سے نہ کہہ پائے

داستاں آنکھوں میں رہ جائے

 

وہ چلی جاتی ہے دور صحیح

یادیں دامن میں میرے رہ جائے

 

دل میں پانی لئے چلتے ہیں

کوئی پیاسا کہیں مل جائے

 

جو بھی پہچانے ملے راہوں میں

ہر کوئی ہمپے اب ہنس جائے

Advertisements

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.