ظلم کرتی ہے جب مجھپے تنہائی


بےوفا ہو گیا ہے درد مجھی سے

دور کا رشتہ ہو گیا خوشی سے

 

ایک بادل کا ٹکڑا اڑتا تھا

ہم نے برستے دیکھا اسے بے بسی سے

 

کوئی کشتی جب کنارے لگتی ہے

وہ ٹھہرتی ہے کتنی خاموشی سے

 

ظلم کرتی ہے جب مجھپے تنہائی

قتل کرتا ہوں اپنی بےخودی سے

جو محبت میں درد پاتے ہیں

آگ لگی ہے روح کے دھاگے میں

Advertisements

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.