کسی دامن کا کیا بھروسہ ہے

اردو شاعری


کسی دامن کا کیا بھروسہ ہے

ہم کو دنیا کا تجربہ ہے

 

روشنی حسن کی پائی جب سے

دل کی تصویر میں اندھیرا ہے

 

اتر آیا ہوں گہرے ساگر میں

اب تو آنسو کا ہی سہارا ہے

 

کیوں پرایوں سے ہم خوشی مانگیں

جب میرا غم ہی مسکراتا ہے

ہم تو اب غیر ہیں انکے لئے

اس قدر دل کو سجا نہ دو

Advertisements

Leave a Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.