عشق شاعری-مجھ سے وہ خفا ہے اور دل مجھ سے خفا ہے

حالات ہی کچھ ایسے ہیں,تو آنسو کیوں نہ آئے

جسکے خیالات میں ہم تھے,وہ اب تک نہ آئے

 

رونے گئے ساگر کنارے,ساحل پہ ہی بیٹھ گئے

یہ سوچتے ڈوب گئے که پانی سر تک نہ آئے

 

 

مجھ سے وہ خفا ہے اور دل مجھ سے خفا ہے

خنجر چبھے ہیں دونوں طرف سے پر آہ تک نہ آئے

 

 

سب سے جدا ہے میرا غم,پھول کی طرح نازک ہے

اتنے جتن سے سنبھالا ہے که مسکان تک نہ آئے

Advertisements

One thought on “عشق شاعری-مجھ سے وہ خفا ہے اور دل مجھ سے خفا ہے”

कमेंट्स यहां लिखें-

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s